پاکستان کے ایٹمی اسلحہ بردار زمینی ، بحری اور فضائی کروز میزائیل

کروز میزائل جیٹ انجن اور ایروڈائنامک لفٹ کے سہارے پرواز کرنے والا ایسا بغیر پائلٹ ہتھیار بردار ڈرون ہے جسے دور دراز کے اہداف...

پاکستان کے ٹیکٹیکل ایٹمی ہتھیار حتف اور نصر بھارتی جارحیت کیلئے سڈن ڈیتھ

چین کے ہاتھوں بھارت کی حالیہ شکستوں کے بعد لداخ کی ہمالیائی سرحدوں کا تناؤ بتدریج اروناچل پردیش ، سکم اور اتر اکھنڈ  تک...

پاک فضائیہ کے پاکستان میراج ری بلڈ فیکٹری میں اپ گریڈڈ میراج لڑاکا طیارے

پاک فضائیہ کا ملٹی رول فائٹر جیٹ میراج 3 اور 5 ورژن پچاس سال پرانا ہونے کے باعث کم اہمیت کا حامل سمجھا جاتا...

پی کے ۔ 15، جے ایف ۔ 17 اور الخالد سے ففتھ جنریشن سٹیلتھ پراجیکٹ عزم تک

عالمی دفاعی مبصرین کے مطابق پی کے 15 اسالٹ رائفل سے الخالد ٹینک اور جے ایف 17 تھنڈر تک پاکستان کی دفاعی پروڈکشن تیزی...

پاکستان ائرفورس کا تربیتی جیٹ اور شیر دل کا ایروبیٹکس طیارہ قراقرم ۔ 8

پاکستان ائر فورس میں فائٹرپائلٹس کی ٹریننگ کیلئے استعمال کیا جانے والا پاکستانی قراقرم ۔ 8 یا کے ۔ 8 پی ایک انٹرمیڈیٹ ٹرینر...

پاکستان کا الخالد ٹینک تباہ کن اٹیک اور جدید ترین ڈیفنس سسٹم کا زبردست امتزاج

الخالد ٹینک پاکستان آرمی کے زیر سروس ایسا جدید مین بیٹل ٹینک ہے، جسے ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا نے پاکستان میں تیار کیا ہے۔ الخالد...

مودی سرکار نے عالمی مارکیٹ کا فلاپ مہنگا ترین رافیل طیارہ کیوں خریدا؟

روسی جنگی ہوابازی کے ماہرین کا دعویٰ ہے کہ بھارت کے فرانس سے خریدے گئے رافیل جنگی طیارے چینی ایئرفورس کے جدید ترین جے 16 لڑاکا طیاروں کیخلاف ناکام اور بیکار ثابت ہوں گے

فرانس کا تیار کردہ رافیل بین الاقوامی مارکیٹ کا مہنگا ترین طیارہ ہے۔ بھارت نے ان 36 جیٹ طیاروں کا معاہدہ چھ کھرب انڈین روپے یعنی 8 ارب ڈالرز میں کیا ہے۔ امریکی ایف 16 کے جدید ترین 72 بلاک کی قیمت 6 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز کے مقابلے میں رافیل کی قیمت 22 کروڑ ڈالرز ادا کی گئی ہے۔ بھارتی اپوزیشن نے مودی سرکار پر اس سودے میں کرپشن کے الزامات لگا رہی ہے۔ خیال رہے کہ پاکستان جے ایف 17 تھنڈر طیارہ رافیل کی قینت سے دس گنا کم صرف 2 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز میں تیار کر رہا ہے۔
 
بھارت اپنے رافیل جیٹ طیاروں کی آمد کا جشن منا رہا ہے۔ اور فوجی ماہرین نے نہ صرف امریکی طیاروں کے مقابلہ میں اس کی صلاحیتوں پر تکرار کے ساتھ یہ سوالات بھی اٹھائے ہیں کہ رافیل طیارے اسلحہ کی انٹر نیشنل مارکیٹ میں کیوں ناکام رہے ہیں اور  اکثر ممالک نے ان کو خریدنے سے کیوں انکار کر دیا ہے
 
ڈاسالٹ کے رافیل بھارت کا واحد انتخاب نہیں تھے کیونکہ کئی دیگر عالمی فرموں نے ایم ایم آر سی اے ٹینڈر میں دلچسپی کا اظہار کیا تھا۔ ابتدائی آفرز میں لاک ہیڈ مارٹن کا ایف 16، بوئنگ کا ایف اے 18 ، یورو فائٹر ٹائفون ، روس کا مگ 35 ، سویڈن صاب کا گریپن اور داسالٹ کا رافیل تھا۔ انڈین ائر فورس نے تمام طیاروں کا تجربہ کیا اور ڈاسالٹ کو 126 رافیل لڑاکا طیارے فراہم کرنے کا ٹھیکہ دے دیا تھا جسے بعد میں 126 سے کم کرکے 36 کردیا گیا ۔
 

رافیل طیاروں کا کوئی خریدار نہیں؟

 
حیرت انگیز صلاحیتوں کا دعوی کرنے والے اس طیارے کا بھارت نے بہت بڑی جانچ پڑتال کے بعد انتخاب کیا ہے لیکن حیرت کی بات ہے کہ ان فرانسیسی طیاروں کے خریدار انتہائی کم ہیں ۔ فرانس اور بھارت کے علاوہ صرف قطر اور مصر ہی رافیل جیٹ طیارے استعمال کر رہے ہیں اور وہ بھی بہت محدود تعداد میں۔
 
روسی جنگی ہوابازی کے ماہرین کا دعویٰ ہے کہ رافیل طیارے چینی ایئرفورس کے جدید ترین طیاروں کیخلاف بیکار ثابت ہوں گے۔ رافیل جیٹ کی زیادہ سے زیادہ رفتار ماچ 1.8 کے بارے میں ہے جو چینی جے 16 کی 2.2 ماچ کے مقابلے میں بہت کم ہے۔ رافیل کی ورکنگ حد بھی چین کے جے 16 سے کم ہے۔ یہاں تک کہ انجن کی پاور میں چینی جے 16 ایس اور روسی ایس یو 35 اس فرانسیسی رافیل طیارے سے کہیں زیادہ برتر ہیں۔ روسی ماہریں کا دعویٰ ہے کہ اگر ہندوستانی فضائیہ تمام 36 جیٹ طیارے بھی تعینات کر دے گی تو بھی تکنیکی برتری چین ہی کی ہوگی۔
 
دفاعی تجزیہ کاروں کے مطابق رافیل کی کامیابی میں سب سے بڑی رکاوٹ یہ ہے کہ یہ ایک بہت ہی ہلکی اورغیر مخصوص ایر فریم کے کے باوجود بہت زیادہ مہنگا ہے۔ یعنی کہ جن ممالک کو اعلی درجے کے لڑاکا طیارے کی تلاش ہوتی ہے وہ اس کی صلاحیتوں سے کہیں زیادہ قیمت کی وجہ سے چھوڑ دیتے ہیں۔ بہتر طیارے کی تلاش رافیل سے زیادہ صلاحیتوں والے امریکی ایف 15 یا روسی ایس یو 35 ، جبکہ درمیانے یا ہلکے وزن کے طیاروں کیلئے امریکی ایف 16 وی ، ایف 18 ای یا روسی مگ 35 زیادہ موثر ہیں ۔
 

جنوبی کوریا اور سنگاپور نے 2000 کی دہائی میں رافیل سے زیادہ طاقتور امریکی ایف 15 کا انتخاب کیا۔ 2015 میں مصر نے فرانس کے ساتھ اسلحے کی بڑی ڈیل کے تحت صرف 24 رافیل طیارے خریدے۔

 
اگلے سال ، سنہ 2016 میں مصری صدر عبدل فتاح السیسی اور فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون کے درمیان اعلی سطح پر بات چیت کے باوجود د بھی دونوں ممالک نے اس معاہدے کو حتمی شکل نہیں دی۔ اور ان کی بجائے مصر نے روس سے دو درجن سے زیادہ ایس یو 35 طیاروں کی خریداری کیلئے معاہدہ کیا۔
 
بھارتی میڈیا پانچ رافیل طیاروں کی آمد کا یوں جشن منا رہا ہے گویا انہوں نے چین کیخلاف جنگ جیت لی ہے۔ بھارتی دفاعی ماہرین بتائیں کہ اگر رافیل اس قدر تباہ کن اور اچھا طیارہ ہے تو عمان ، کوریا ، سنگاپور ، لیبیا ، کویت ، کینیڈا ، برازیل ، بیلجیم ، متحدہ عرب امارات ، سوئٹزرلینڈ ، ملائشیا نے اسے خریدنے سے کیوں انکار کردیا تھا ؟ حقائق یہی ہیں کہ بھارت  کے علاوہ صرف قطر اور مصر نے ہی رافیل خریدے ہیں۔
 
رافیل کے تیسرے خریدار ، بھارت نے پہلے میک ان انڈیا کی شرط کے تحت 126 جیٹ طیارے حاصل کرنے کی تجویز پیش کی تھی ۔ جو فرانس کی طرف سے میل ان انڈیا کی شرط نا ماننے پر صرف 36  کر دی گئی ۔ اپریل 2015 میں اس معاہدے کے اعلان کے بعد پہلے پانچ طیاروں کو بھی بھارت پہنچنے میں پانچ سال لگے ہیں
 
تجزیہ کاروں کے مطابق ، رافیل بنانے والوں کی زبردست مارکیٹنگ کے باوجود ، فرانس کا نسبتا چھوٹا اور ناکارہ دفاعی شعبہ لڑاکا طیارہ پروگرام اپنی حدود  پوری کر چکا ہے۔ چھوٹی پروڈکشن لائینز طیارے کو تیزی سے یا موثر انداز میں تیار کرنے سے قاصر ہیں۔ حقیقت یہی ہے کہ تحقیق اور ترقی کیلئے فرانسیسی بجٹ امریکہ یا روس کے مقابلہ میں کم ہے۔
 
مودی سرکار پر رافیل کے سودے میں کرپشن کے الزامات لگانے والے کہ رہے ہیں کہ اس طیارے کی قیمت اس کی خصوصیات کے مقابلے میں بہت زیادہ ہے۔ یا ممکن ہے کہ بھارتی سرکار میں موجود  خریداری کا معاہدہ کرنے والوں کو کمیشن دینے کیلئے اس قدر زیادہ قیمت کا معاہدہ کیا گیا ہے۔
 
عالمی ماہرین کے مطابق بیشتر ممالک نہ صرف فرانس کے مقابلے میں امریکی تکنیکی برتری کے سبب امریکی طیارے خریدنا پسند کرتے ہیں بلکہ فرانس کی بجائے امریکیوں کو خوش کرنے کیلئے بھی امریکہ سے اسلحہ کی خریداری کو ترجیح دیتے ہیں۔ حقیقت یہی ہے کہ رافیل عمدہ خصوصیات کے تمام بلند بانگ دعووں کے باوجود  بین الاقوامی مارکیٹ کی جنگ ہار گئے ہیں۔ اور نریندرا مودی سرکار نے اربوں ڈالرز کی کمیشن کھانے کیلئے بھارت کو رافیل طیاروں کی خریداری سے شدید نقصان پہنچایا ہے۔
FAROOQ RASHID BUTThttp://thefoji.com
Farooq Rashid Butt alias Farooq Darwaish is an ex banker, a defence analyst, journalist, patriotic blogger, poet and freelancer WordPress web designer. A passionate flag holder of peace of the world

DEFENCE ARTICLES

بی جے پی راہنما راجیشور سنگھ کا کہنا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے مطابق 2021 تک...
دنیا کے جدید ترین طیاروں سے لیس ہندوستانی فضائیہ طیاروں اور عملے کی تعداد کے اعتبار سے...
مل ماسکو ہیلی کاپٹر پلانٹ روس کا تیار کردہ ایم آئی ۔ 35 ایم ملٹی رول اٹیک...
اسرائیلی اخبار یروشلم پوسٹ نے 23 فروری 1987ء کو یہ انکشاف شائع کیا کہ اسرائیل نے پاکستانی...
نیٹو کی جنگی مشقوں کے علاوہ ایف 16 اور رافیل جیٹس کبھی کسی بھی فضائی لڑائی میں...
سنہ 1953ء میں پاک فوج میں امریکن آرمی کی مدد سے پہلا ایلیٹ کمانڈو یونٹ تشکیل دیا...

Comments

Leave a Reply

DEFENCE NEWS

ایرانی ایٹمی سائینس دان محسن فخری زادے کا قتل کمزور حفاظتی نظام کا نتیجہ ہے

ایرانی ایٹمی پروگرام کے بانی اور اہم ایٹمی سائینس دان محسن فخری زادہ تہران میں قتل کر دیے گئے ہیں ۔یاد رہے کہ یہ...

فرانس نے پاکستانی میراج طیارے اور اوگسٹا ابدوزیں اپ گریڈ کرنے سے انکار کر دیا

پاکستانی عوام اور حکومت نے فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون کے اسلام کیخلاف متنازعہ بیانات پر کڑی تنقید کی ہے۔ حکومت نے عوام کی طرف...

شکست خوردہ آرمینی فوج نے کاراباخ چھوڑتے ہوئے گھر ہسپتال اور جنگلات نذرِ آتش کر دیے

روس کی مداخلت اور ثالثی میں آذربائیجان اور آرمینیا کے درمیان طے پانے والے جنگ بندی کے سمجھوتے کے مطابق شکست خوردہ آرمینی مقبوضہ...

آذربائیجان جنگ کے ہیرو ٹی بی 2 ترک ڈرون اور پاک ترک دوستی سے خوف زدہ بھارت

دنیا کے جدید اسلحہ ساز حیرت زدہ تھے جب آذربائیجان کے ڈرون حملوں نے آرمینی دفاع کو مکمل تباہ و برباد کر کے اسے...

DEFENCE BLOG